Categories
Uncategorized

حرمت خانہ کعبہ

دیوبند ی مسلک کا یہ عقیدہ ہے کہ

’’وہ حصہ زمین جو جناب رسول اﷲ کے اعضاء مبارکہ کومَس کیے ہوئے ہے علی الاطلاق افضل ہے۔ یہاں تک کہ کعبہ اور عرش وکرسی سے بھی افضل ہے۔‘‘

یہ عقیدہ ان کی کتاب ‘‘اَلْمُھَنَّدُ عَلَی الْمُفَنَّدِ ’’میں بیان کیا گیا ہے ۔ یہ وہ کتاب ہے جو احمدرضاخاں بریلوی  کی کتاب ‘‘حُسّامُ الحَرَمَیْن علی منحر الکفر والمین’’ کے جواب میں لکھی گئی، جس میں دیوبندی عقائد لکھے گئے ہیں، اور ان پر اس وقت کے بڑے بڑے تمام دیوبندی علماء مثلاً خلیل احمدسہارنپوری (مصنف کتاب) ، اشرف علی تھانوی، مفتی کفایت اﷲ، وغیرہ نے مہر تصدیق ثبت کی ہے ۔

جس کسی کے دل میں اﷲ کا ذرہ برابر بھی وقار ہوگا وہ اس باطل عقیدے کا فوراً رد کردے گا، لیکن توحید کے بلند بانگ دعوے کرنے والے ان مسلک پرستوں کے دل میں اﷲ کا کوئی وقار نہیں۔ کیا یہ لوگ اﷲ کے اس فرمان سے ناآشنا ہیں :

مَالَکُمْ لاَ تَرْجُوْنَ لِلہِ وَقَارًا

(نوح: 13)

’’تمہیں کیا ہوگیا ہے ، تمہارے نزدیک اﷲ کا کوئی وقار نہیں ‘‘

اس عقیدے میں اﷲتعالیٰ کی عظمت و کبریائی کی تنقیص کرتے ہوئے رسول اﷲ کو فوقیت دی گئی ہے ۔ عبد کو معبود سے ، مخلوق کو خالق سے بڑھاکر پیش کیا گیا ہے ۔ اﷲ تعالیٰ سے منسوب چیزوں کے مقابلے میں رسول  سے منسوب چیز کو افضل قرار دیا گیا ہے ، حالانکہ جس طرح اﷲ سے افضل تو کیا اس کے برابر بھی کوئی چیز نہیں، اسی طرح دوسروں سے منسوب کوئی شے بھی منسوب الیٰ اﷲسے افضل و اعلیٰ بلکہ برابر بھی نہیں ہوسکتی کہ یہی توحید باری تعالیٰ کا تقاضہ ہے:

ِلَّذِیۡنَ لَا یُؤْمِنُوۡنَ بِالۡاٰخِرَۃِ مَثَلُ السَّوْءِ ۚ وَ لِلہِ الْمَثَلُ الۡاَعْلٰی ؕ وَہُوَ الْعَزِیۡزُ الْحَکِیۡمُ

(النحل: 60)

’’ ان لوگوں کے لیے جو ایمان نہیں رکھتے آخرت پر ، بری مثال ہے اور اللہ کے لیے سب سے اعلی مثال ہے اور وہی بہت غالب ، خوب حکمت والا ہے‘‘۔

لَمْ  یَکُنْ لَّہٗ کُفُوًا  اَحَدٌ

(الاخلاص :4)

’’ اس کا کوئی کفو (برابر و ہمسر) نہیں ‘‘۔

ھَلْ  تَعْلَمُ  لَہ’  سَمِیًّا

(مریم :65)

’’ کیا تو جانتا ہے کسی کو اس کے نام کا ( اس کے جیسا)‘‘

لَیۡسَ کَمِثْلِہٖ  شَیۡءٌ

(الشوریٰ :11)

’’ اس کی مثال جیسی (کائنات) میں کوئی چیز نہیں ‘‘

خانہ کعبہ کا کیا مقام ہے، اس بارے میں اللہ تعالیٰ کا بیان ملاحظہ فرمائیں :

اِنَّ اَوَّلَ بَیْتٍ وُّضِعَ لِلنَّاسِ لَلَّذِیْ بِبَکَّۃَ مُبٰرَکاً وَّ ھُدًی لِّلْعٰلَمِیْنَ

(آل عمران :96)

’’بے شک پہلا گھر جو لوگوں کے لیے (بغرض عبادت) بنایا گیا وہی ہے جو مکہ میں ہے، بابرکت ہے اور جہانوں کے لیے موجب ہدایت ہے۔‘‘

جَعَلَ اللہُ  الْکَعْبَۃَ  الْبَیْتَ الْحَرَامَ  قِیٰمًا لِّلنَّاسِ

(المائدۃ :97)

’’اﷲ نے لوگوں کے قیام کے واسطے کعبہ کو حرمت والا گھر بنایا ۔‘‘

یہی وہ عزت وشرف والا گھر ہے جسے آدم   نے بنایا ، پھر نبی  کے جد امجد ابراہیم و اسماعیل علیہما السلام نے تعمیر کیا۔ یہی وہ گھر ہے جس کی طرف منہ کرکے فریضۂ صلوٰۃ ادا کرنے کا حکم دیا گیا  اور اس کا استقبال ادائیگی صلوٰۃ کی شرط لازم قرار دیا گیا ۔ یہی وہ مقام ہے جس کے طواف کے بغیر حج جیسی افضل ترین عبادت نہیں ہوتی ۔ نبیاور ان سے پہلے انبیاءعلیہم السلام نے اس کا طواف کیا، جہاں ادا کی جانے والی صلوٰۃ (اجروثواب میں) مسجد نبوی کی سوصلوٰۃ  اور دوسری مساجد کی ایک لاکھ صلوٰۃ  سے افضل ہے ۔لیکن مسلک پرستوں کی نظر میں شاید اس کی کوئی اہمیت نہیں ۔ کعبہ شعائراﷲ میں سے ہے جس کی توہین کفر اورتعظیم تقویٰ ہے:

یٰۤاَیُّہَا الَّذِیۡنَ اٰمَنُوۡا لَا تُحِلُّوۡا شَعَآئِرَ اللہِ

(المائدۃ:2)

’’ مومنو! شعائر اﷲ کو حلال نہ سمجھو (ان کی بے حرمتی نہ کرو)۔‘‘

وَ مَنْ  یُّعَظِّمْ شَعَآئِرَ اللہِ فَاِ نَّھَا مِنْ تَقْوَی الْقُلُوْبِ

(الحج :32)

’’اور جو شعائر اﷲ کی تعظیم کرتا ہے تو یہ دل کے تقویٰ کی بات ہے‘‘

اوپر دی گئی آیات و احادیث کی روشنی میں قبرنبوی کوخانہ کعبہ سے افضل جاننے کا عقیدہ ،کیا کعبے کی تنقیص و توہین نہیں کرتا ؟

انہوں نے نبی کی قبر کی مٹی کو اللہ کے عرش سے بھی افضل بیان کیا ہے ( استغفر اللہ )۔ قرآن مجید میں  عرش الہی کے بارے میں بیان کیا گیا:

اِنَّ رَبَّکُمُ اللہُ الَّذِیْ خَلَقَ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضَ فِیْ سِتَّۃِ اَیَّامٍ ثُمَّ اسْتَوٰی عَلَی الْعَرْشِ

(الاعراف : 54/یونس :3)

’’بیشک تمہارا رب اﷲ ہے جس نے چھ دن میں آسمانوں اورزمین کو بنایا ، پھر عرش پر مستوی ہوگیا‘‘

ا سی طرح کا مضمون قرآن میں دوسری جگہوں پر بھی ہے :

اَلرَّحْمٰنُ عَلَی الْعَرْشِ اسْتَوٰی

(طٰہٰ :5)

’’وہ بڑا مہربان عرش پر مستوی ہوا ‘‘۔

وَھُوَ رَبُّ الْعَرْشِ الْعَظِیْمِ

(التوبہ :129)

’’وہ بڑی عظمت والے عرش کا مالک ہے ‘‘۔

لَآ اِلٰہَ اِلاَّ ھُوَ  رَبُّ الْعَرْشِ الْکَرِیْمِ

(المومنون :116)

’’ اس بڑی عظمت والے عرش کے مالک کے علاوہ کوئی الٰہ نہیں ‘‘

لَوْکَانَ فِیْھِمَآ اٰلِھَۃٌ اِلاَّ اللہُ لَفَسَدَتَا ج فَسُبْحٰنَ اللہِ رَبِّ الْعَرْشِ عَمَّا یَصِفُوْنَ

(الانبیاء :22)

’’اگر ان دونوں (زمین وآسمان) میں اﷲ کے علاوہ کوئی اور الٰہ ہوتا تو ضرور فساد ہوجاتا، سو اﷲ جو عرش کا مالک ہے پاک ہے اُن باتوں سے جو یہ بیان کرتے ہیں۔‘‘

ان کے علاوہ بھی قرآن میں متعدد مقامات پر عرش الٰہی کی عظمت، بزرگی، عزت، تشریف، تعظیم، تکریم، تمجید، تمکنت و توقیرکا ذکر ہے ۔ عرش الٰہی کی فضیلت بخاری کی اس روایت سے بھی واضح ہوتی ہے کہ جس دن اﷲ کے (عرش کے) سائے کے سوا کوئی سایہ نہ ہوگا تو سات قسم کے اشخاص اس کے نیچے ہوں گے ۔عرش وہ جگہ ہے جس پر تمام کائنات کا خالق و مالک مستوی[1]ہے ۔ اس کی عظمت کا کیا کہنا ،لیکن دیوبندی حضرات   نبی کی قبر کی مٹی کو اللہ کے عرش سے افضل قرار دیتے ہیں۔

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *